بُرے حالات میں دوست کہاں پاس آتے ہیں

تو ہی بتا اے دلِ بیتاب ہم کو
خوش رہنے کے آداب کہاں آتے ہیں

میں تو یک مُشت اُسے سونپ دوں سب کچھ لیکن
اِک مٹھی میں میرے خواب کہاں آتے ہیں

مدتوں بعد اُسے دیکھ کر دل بھر آیا
ورنہ صحرائوں میں سیلاب کہاں آتے ہیں

میری بے درد نگاہوں سے اگر بھولے سے
نیند آجائے بھی تو اب خواب کہاں آتے ہیں

تنہا رہتا ہوں دن بھر میں بھری دنیا میں
حالات بُرے ہوں تو پھر یار کہاں آتے ہیں

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s