تتلیاں پکڑنے کو

کتنا سہل جانا تھا
خوشبوں کو چھو لینا
بارشوں کے موسم میں شام کا ہر ایک منظر
گھر میں قید کر لینا
روشنی ستاروں کی مٹھیوں میں بھر لینا
کتنا سہل جانا تھا
خوشبوں کو چھو لینا
جگنوں کی باتوں سے پھول جیسے آنگن میں
روشنی سی کر لینا
اس کی یاد کا چہرہ خواب ناک آنکھوں کی
جھیل کے گلابوں پہ دیر تک سجا رکھنا
کتنا سہل جانا تھا
اے نظر کی خوش فہمی!اس طرح نہیں ہوتا
“تتلیاں پکڑنے کو دور جانا پڑتا ہے”

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s